Sunday, January 24, 2021
عہدِ موجود… اور طلبہ
نا صرف یہ کہ انقلابات بلکہ دیگر سماجی تبدیلیوں کے عمل میں بھی طلبہ نے ہر ملک اور ہر عہد میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ طلبہ/نوجوان کسی بھی سماج کی سب سے حساس پرت ہوتے ہیں جو کسی بھی ممکنہ تبدیلی کے زیر اثر سب سے پہلے متحرک...
Peace Talks with Taliban
ء1982 میں مظہرالاسلام کاافسانہ ”کندھے پر کبوتر“ خاصہ مقبول ہوا۔ یہ کہانی تھی، اُس نوجوان کی جو کالج ختم ہوتے ہی تیز تیز قدم اُٹھاتے گھر کی جانب لوٹ رہا تھا۔ مگر گھر کے سامنے پہنچتے ہی دل دھک سے بیٹھ گیا۔ "یہ کیا؟“ دروازے پر تو تالا لگا...
Kashmir
٥ اگست دو ہزار انیس کو دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کہلانے والے انڈیا نے اپنے آئین کا آرٹیکل ٣٧٠ اور ٣٥ اے ایک صدارتی آرڈیننس کے ذریعے ختم کر دیا جس کے تحت ریاست جموں و کشمیر کیمتنازعہ حیثیت اور سٹیٹ سبجیکٹ کو بحال رکھ کر انڈیا...
کامریڈ ہیلن بولک
کامریڈ ہیلن بولک ترکی کے مشہور انقلابی بینڈ گروپ یوروم کی انقلابی موسیقار کامریڈ ہیلن بولک جس کا نام میں نے اس وقت سنا جب وہ ظالم سماج کا مقابلہ انقلابی دھنوں سے کرتے ہوئے دنیا سے چلی گئیں لیکن ایسا محسوس ہوا جیسے بہت قریبی انقلابی ساتھی دنیا سے...
دنیا، کورونا وائرس کے بعد یووال نوح حراری فنانشل ٹائنز۔20 مارچ 2020 ترجمہ و تلخیص - - - عرفان بلوچ انسانیت کو اب کورونا وائرس جو کہ ایک عالمی بحران ہے، کا سامنا ہے۔ شاید ہماری نسل کا سب سے بڑا بحران۔ اگلے چند ہفتوں میں عوام اور...
لاک ڈاؤن
چودہ دن تک مکمّل لاک ڈاؤن کا فیصلہ مگر عوام کے لیے ضروریات زندگی کی کوئی واضح حکمت عملی نہیں. " اظہر رشید" ریاست پاکستان اور اس کے زیر انتظام کشمیر میں عوام کی اکثریت کا ذریعہ آمدن دیہاڑداری ہے جن میں سرکاری ملازمین اور بڑے کاروباری حضرات...
عورت مارچ
عورت مارچ ہر سال آٹھ اکتوبر کو پوری دنیا میں انتہائی زور شور سے منایا جاتا ہے. دنیا بھر کی خواتین جلسے کرتی ہیں ریلیاں نکالتی ہیں جبکہ چند ممالک میں اس دن عام تعطیل ہوتی ہے. اقوام متحدہ نے 1977 کو ایک قرارداد کے ذریعے ہر سال 8...
سنی شیعہ تقسیم
سنی شیعہ تقسیم مشرقی وسطی یعنی عراق و شام کے حالات سب کے سامنے ہیں۔ کئی دہائیوں سے جلتی ہوئی اس آگ نے  نجانے کتنے معصوم لوگوں کی جانیں لی ہیں۔ کتنے نوجوان ایک روشن اور پر امن مستقبل کے خواب لیے اس جنگ کا ایندھن بن چکے ہیں۔ یہ ایک ایسی جنگ کےجس میں انسان بطور بارود استعمال ہوئے ہیں۔ بہت سارے عراقی سیاستدان اس بات کی نفی کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ سب نظریات ہیں اور قبل از وقت دعوے ہیں۔ جب کی دوسری طرف سنی شیعہ تقسیم اور انکے رہنماؤں کے درمیان بڑھتے ہوئے فاصلے۔ اس بات کی طرف اشارہ ہیں کہ اس خطے کو تقسیم کی طرف دھکیلا جا رہا ہے۔ اگر ہم اس منصوبے کو جغرافیائی انداز میں دیکھیں تو ہمیں لگتا ہے۔ اس منصوبے کا آغاز صوبہ انبار سے ہو گا، بعد میں صوبہ نینوا، صلاح الدین اور دیالہ کا ایک حصہ اس میں شامل کر دیا جائے گا۔ یہ تینوں علاقے عراقی نقشے پر ایسی جگہ پر واقع ہیں۔ جس سےباقی عراق کو شام سے کاٹ دیا جائے گا۔ یعنی اس اس خطے میں سنی ریاست کے قیام کا مقصد ایران کا مڈل ایسٹ میں بڑھتے ہوئےاثر کو روکنا ہے۔ میرا سب سے زیادہ مطالعہ مشرق وسطیٰ کے متعلق ہے۔ القاعدہ سے لے کر داعش جیسی سفاک تنظیم کے بننے تک۔ اور اس خطے میں امریکی فوج کے عروج اور زوال کو پہلے ایک کالم میں بیان کر چکا ہوں۔ لیکن ابھی بھی مڈل ایسٹ کے متعلق کسی مسئلے پر سوچتاہوں تو سر چکرانے لگتا ہے۔ اس خطے میں کون کس کے خلاف ہے اور کون کس کے ساتھ ہے۔کون کس کیلئے کام کر رہا ہے اور  کون کس کو دھوکا دے رہا ہے۔ یہ ایسے سوال ہیں جن کی گتھی سلجھاتے ہوئے دماغ کی رگیں پھٹنے لگتی ہیں۔ مڈل ایسٹ کی موجودہ صورتحال مڈل ایسٹ کی موجودہ صورتحال پر ایک طائرانہ نگاہ ڈالیں تو یہ حقیقت سامنے آتی ہے کہ اس خطے کے حالات پر اب  امریکہ کی گرفت کمزور پڑ گئی ہے۔ لیکن ابھی اتنی بھی کمزور نہیں کہ مڈل ایسٹ کو ایران اور روس اس امریکی شکنجے سے صحیح سلامت نکال سکیں۔ فی الحال ایسی کوئی بھی صورتحال نظر نہیں آ رہی ہے۔ سن 2003 میں امریکی حملے کے بعد سے عراق، واشنگٹن اور تہران کے مابین تنازعہ کا سب سے بڑا میدان رہا ہے۔ لیکن دونوں دشمنوں کے مابین تناؤ  جنوری 2020 کو عروج پر پہنچاہے۔ جب بغداد میں امریکی ڈرون حملے میں، عراق کے حشد الشعبینیم فوجی دستے کے نائب سربراہ، اعلی ایرانی جنرل قاسم سلیمانی اور ابو مہدی المہندیس ہلاک ہوگئے۔ اس کے بعد ایران کی طرف سے امریکی فوجی اڈوں پر رسمی حملے بھی ہوئے ہیں۔ جس کو ایران نے اپنے بدلے کے طور پر پیش کیا ہے۔ اور اپنے شہریوں کے غصے کو ایک حد تک کم کیاہے۔ جب کہ دوسری طرف ہم دیکھتے ہیں کہ ٹرمپ انتظامیہ نے ایران پر مزید سخت پابندیوں کا عندیہ بھی دیا ہے۔ جبکہ ایران نے قاسم سلیمانی کے قتل کے بعد،  اپنے عراقی شیعہ سیاستدانوں اور ان کے اتحادیوں کو عراقی پارلیمنٹ میں جا کر امریکی فوج کی 17 سالہ موجودگی کو ختم کرنے کیلئے قرارداد جمع کروا دی ہے۔ جبکہ اس دوران پارلیمنٹ میں سنی اور کرد ارکان پارلیمنٹ کی عدم موجودگی نےبہت سارے سوال کھڑے کر دیے تھے۔ جبکہ گزشتہ دن عراق میں امریکی فوج کے انخلا کیلئے ہونے والے مظاہروں نے امریکی انتظامیہ کی نیندیں اڑا دی ہیں۔ اب سوال یہ ہےکہ، کیا امریکہ مشرق وسطیٰ کو اتنی آسانی سے چھوڑ دے گا؟ اپنی اربوں ڈالر کی سرمایہ کاری کو ایسے ضائع ہونے دے گا؟  دنیامیں تیل کے سب سے بڑے ذخائر سے منہ موڑ سکتا ہے یا نہیں؟ آذاد چھوڑ سکتا ہے؟ امریکی انخلا کا سیدھا سیدھا مطلب یہ ہوگا کہ مشرق وسطیٰ کو ایران کے کنٹرول میں دے دیا...
دنیا ____ قاسم سلیمانی کے بعد
دنیا ____ قاسم سلیمانی کے بعد دنیا کی معیشت پر امریکہ، ایران اور مڈل ایسٹ کا کتنا بڑا اثر پڑتا ہے آئیے دیکھتے ہیں۔ جمعہ کے دن شام کو ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کو امریکہ ایک ڈرون حملے میں مار دیتا ہے جس کے بعد دنیا کے حالات کچھ اس...
General Qasim Sulaimani
چند روز قبل اپنے فلوریڈا کے فارم  ہاؤس میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنی ایڈوائزری کمیٹی کے ساتھ بیٹھ کر ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کو مارنے کا فیصلہ کرتا ہے. اور اس کا نتیجہ 2 جنوری کو ایرانی جنرل کا بغداد ایئر پورٹ پر پہنچتے ہی ڈرون...