کیا امریکہ عراق کو تقسیم کرنے جا رہا ہے؟ | سنی شیعہ تقسیم|

194
سنی شیعہ تقسیم

سنی شیعہ تقسیم

مشرقی وسطی یعنی عراق و شام کے حالات سب کے سامنے ہیں۔ کئی دہائیوں سے جلتی ہوئی اس آگ نے  نجانے کتنے معصوم لوگوں کی جانیں لی ہیں۔ کتنے نوجوان ایک روشن اور پر امن مستقبل کے خواب لیے اس جنگ کا ایندھن بن چکے ہیں۔ یہ ایک ایسی جنگ کےجس میں انسان بطور بارود استعمال ہوئے ہیں۔ بہت سارے عراقی سیاستدان اس بات کی نفی کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ سب نظریات ہیں اور قبل از وقت دعوے ہیں۔ جب کی دوسری طرف سنی شیعہ تقسیم اور انکے رہنماؤں کے درمیان بڑھتے ہوئے فاصلے۔ اس بات کی طرف اشارہ ہیں کہ اس خطے کو تقسیم کی طرف دھکیلا جا رہا ہے۔

اگر ہم اس منصوبے کو جغرافیائی انداز میں دیکھیں تو ہمیں لگتا ہے۔ اس منصوبے کا آغاز صوبہ انبار سے ہو گا، بعد میں صوبہ نینوا، صلاح الدین اور دیالہ کا ایک حصہ اس میں شامل کر دیا جائے گا۔ یہ تینوں علاقے عراقی نقشے پر ایسی جگہ پر واقع ہیں۔ جس سےباقی عراق کو شام سے کاٹ دیا جائے گا۔ یعنی اس اس خطے میں سنی ریاست کے قیام کا مقصد ایران کا مڈل ایسٹ میں بڑھتے ہوئےاثر کو روکنا ہے۔

سنی شیعہ تقسیم

میرا سب سے زیادہ مطالعہ مشرق وسطیٰ کے متعلق ہے۔ القاعدہ سے لے کر داعش جیسی سفاک تنظیم کے بننے تک۔ اور اس خطے میں امریکی فوج کے عروج اور زوال کو پہلے ایک کالم میں بیان کر چکا ہوں۔ لیکن ابھی بھی مڈل ایسٹ کے متعلق کسی مسئلے پر سوچتاہوں تو سر چکرانے لگتا ہے۔ اس خطے میں کون کس کے خلاف ہے اور کون کس کے ساتھ ہے۔کون کس کیلئے کام کر رہا ہے اور  کون کس کو دھوکا دے رہا ہے۔ یہ ایسے سوال ہیں جن کی گتھی سلجھاتے ہوئے دماغ کی رگیں پھٹنے لگتی ہیں۔

مڈل ایسٹ کی موجودہ صورتحال

مڈل ایسٹ کی موجودہ صورتحال پر ایک طائرانہ نگاہ ڈالیں تو یہ حقیقت سامنے آتی ہے کہ اس خطے کے حالات پر اب  امریکہ کی گرفت کمزور پڑ گئی ہے۔ لیکن ابھی اتنی بھی کمزور نہیں کہ مڈل ایسٹ کو ایران اور روس اس امریکی شکنجے سے صحیح سلامت نکال سکیں۔ فی الحال ایسی کوئی بھی صورتحال نظر نہیں آ رہی ہے۔

سن 2003 میں امریکی حملے کے بعد سے عراق، واشنگٹن اور تہران کے مابین تنازعہ کا سب سے بڑا میدان رہا ہے۔

لیکن دونوں دشمنوں کے مابین تناؤ  جنوری 2020 کو عروج پر پہنچاہے۔ جب بغداد میں امریکی ڈرون حملے میں، عراق کے حشد الشعبینیم فوجی دستے کے نائب سربراہ، اعلی ایرانی جنرل قاسم سلیمانی اور ابو مہدی المہندیس ہلاک ہوگئے۔ اس کے بعد ایران کی طرف سے امریکی فوجی اڈوں پر رسمی حملے بھی ہوئے ہیں۔ جس کو ایران نے اپنے بدلے کے طور پر پیش کیا ہے۔ اور اپنے شہریوں کے غصے کو ایک حد تک کم کیاہے۔

جب کہ دوسری طرف ہم دیکھتے ہیں کہ ٹرمپ انتظامیہ نے ایران پر مزید سخت پابندیوں کا عندیہ بھی دیا ہے۔ جبکہ ایران نے قاسم سلیمانی کے قتل کے بعد،  اپنے عراقی شیعہ سیاستدانوں اور ان کے اتحادیوں کو عراقی پارلیمنٹ میں جا کر امریکی فوج کی 17 سالہ موجودگی کو ختم کرنے کیلئے قرارداد جمع کروا دی ہے۔ جبکہ اس دوران پارلیمنٹ میں سنی اور کرد ارکان پارلیمنٹ کی عدم موجودگی نےبہت سارے سوال کھڑے کر دیے تھے۔

جبکہ گزشتہ دن عراق میں امریکی فوج کے انخلا کیلئے ہونے والے مظاہروں نے امریکی انتظامیہ کی نیندیں اڑا دی ہیں۔ اب سوال یہ ہےکہ، کیا امریکہ مشرق وسطیٰ کو اتنی آسانی سے چھوڑ دے گا؟ اپنی اربوں ڈالر کی سرمایہ کاری کو ایسے ضائع ہونے دے گا؟ 

دنیامیں تیل کے سب سے بڑے ذخائر سے منہ موڑ سکتا ہے یا نہیں؟ آذاد چھوڑ سکتا ہے؟ امریکی انخلا کا سیدھا سیدھا مطلب یہ ہوگا کہ مشرق وسطیٰ کو ایران کے کنٹرول میں دے دیا جائے۔ کیا امریکی اتنے حساس اور جغرافیائی لحاظ سے اہم ترین خطے کو ایران کے گود میں ڈال کر چپ چاپ چلا جائے گا؟

ہر گز نہیں۔ پہلی بات تو یہ ہے امریکہ یہاں سے کسی بھی صورت جانے کیلئے تیار نہیں ہے۔  وہ اس خطے میں اپنا اثر و رسوخ قائم رکھنےکیلئے کسی بھی حد تک جا سکتا ہے۔ جبکہ دوسری طرف امریکہ کی طرف سے اس خطے کو کنٹرول کرنے کیلئے اس کو تقسیم کرنے پربھی غور ہو رہا ہے۔ اس خطے کو سنی اور شیعہ ریاست میں تقسیم کر کے یہاں برصغیر والی کہانی دہرائی جائے گی۔

خودمختار سنی خطہ:۔

عراق میں ایک خودمختار سنی خطے کی تشکیل ہمیشہ امریکی کیلئے ایک آپشن رہا ہے۔ جس پر کسی بھی وقت عمل درآمد کیا جاسکتا تھا۔ کیونکہ امریکی کسی بھی صورت ایران کو شام اور بحیرہ روم تک رسائی دینے کے حق میں نہیں رہا۔ اسی لیے  مغربی عراق میں امریکہ نواز سنی ریاست کا قیام، ایران کو شام سے کاٹ دے گا۔

اور ایران کی حزب اللہ تک رسائی کو مشکل بنا دے گا۔ اور یاد رہے واشنگٹن کے لئے، عراق میں ایسے سنی خطے کو کھڑا کرنے کا خیال جوبائیڈن کے 2007 کی تجویز پر مشتمل ہے۔ جو اب ڈیموکریٹک پارٹی کے صدارتی امیدوار ہونے کے خواہاں ہیں۔

امریکی کے پاس اس سکیم کو عراق  پر نافذ کرنے کیلئے سب سے بہترین موقعہ 2006 سے 2008 کا دورانیہ تھا۔ جب اس خطے میں فرقہ واریت عروج پر تھی۔ لیکن اس وقت عراق پر امریکی کنٹرول مضبوط تھا۔ اسی لیے اس سکیم کو فائلوں تک محدود رکھا گیا تھا۔ لیکن اب امریکی فوجیوں کو عراق سے نکالنے کے مظاہروں میں تیزی نے اس منصوبے میں نئی جان ڈال دی ہے۔

اس تحریر سے متعلق مزید پڑھیے: بوڑھا امریکہ

مشرق وسطیٰ میں امریکہ اپنے اختیار کے بقا کی جنگ لڑ رہا ہے۔ اب متحدہ عراق یا عراقی اتحاد اس کی ترجیح نہیں رہا ہے۔

داعش کے خاتمے کے بعد عراق پر ایران نواز شیعہ سیاستدانوں کے غلبے نے وہاں کے سنی رہنماؤں کو متحدہ عراق کی بجائے، سنی عراق کے بارے سوچنے پر مجبور کر دیا ہے۔ کیونکہ عراقی حکومت میں  شیعہ رہنماؤں نے کچھ فیصلے سنی رہنماؤں کی منظوری یامرضی کے بغیر کیے ہیں۔ 

جبکہ ہم دیکھتے ہیں کہ داعش کے بعد پیدا ہونے والے خلا کو کو پُر کرنے کے لیے عراق میں شیعہ اور سنی گروہوں میں مقابلہ شروع ہوا تھا۔ جس کی وجہ سے یہاں سنی اور شیعہ گروہوں کے درمیان درمیان فاصلے بڑھنے لگے تھے۔ یہ فاصلےاختلافات سے شروع ہوئے تھے۔ اب ان اختلافات کی جگہ نفرت نے لے لی ہے۔  جس کی نتجہ ممکنہ طور پر عراق کی دو حصوں میں تقسیم کی صورت میں برآمد ہو گا۔ عالمی طاقتوں کی مفاد پر اس خطے میں ایک بار پھر فرقہ واریت کو ہوا دی جا رہی ہے۔ جو کہ پہلےسے زیادہ تباہی لائے گی۔

اس تقسیم سے ایران کوکیا فرق؟

آپ میں سے کسی کو معلوم ہو کہ اس تقسیم سے ایران کو کیا فرو پڑنا؟

جواب کمنٹ میں دیجیے

ایران اس تقسیم کے خلاف ہے لیکن ایران اس معاملے میں بے بس نظر آ رہا ہے کیونکہ امریکہ کے ساتھ باقی تمام عرب ریاستیں اس تقسیم کے حق میں ہیں۔ کیونکہ عراق میں شیعہ مخالف سنی ریاست کا قیام عرب ممالک کے مفاد میں ہے۔ اس طرح وہ اس ریاست کوایران کے خلاف جاری جنگ میں ایک ڈھال کے طور پر استعمال کر سکیں گے۔

سنی رہنما اس خطے میں کسی بھی صورت شیعہ بالادستی قبول نہیں کریں گے۔ اس کے بدلے وہ الگ ہونا پسند کریں گے اور امریکیوں کو اپنی سرزمین پر فوجی اڈے دینے سے کبھی انکار نہیں کریں گے۔ کیونکہ مطلوبہ ریاست کے قیام  کے لئے صرف امریکہ ہی ان کی مدد کر سکتا ہے۔ اور اس احسان کا بدلی ابدی غلامی کی صورت میں سود سمیت ادا کیا جائے گا۔

تحریر: عرفان بلوچ

Leave a Reply